زھرہ

تاریخ - آسان

ہمارے نظام شمسی کے اندر ایک سیارہ۔

عیسائی بائبل کہتی ہے کہ ابراہیم کی جائے پیدائش پر لوگ سورج، چاند اور ستاروں کی پوجا کرتے تھے۔ آثار قدیمہ کے ماہرین کو ایسے شواہد ملے کہ وہ لوگ سورج، چاند اور "ستارہ زہرہ" کی پوجا کرتے تھے۔ تاہم آج ماہرین فلکیات اس بات کی تصدیق کرتے ہیں کہ یہ "وینس کا ستارہ" دراصل سیارہ زہرہ ہے، ستارہ نہیں۔ قرآن نے اسے صحیح طور پر ایک سیارے کے طور پر بیان کیا ہے۔


اشتر کا ستارہ


اشتر کا ستارہ یا اننا کا ستارہ قدیم سمیری دیوی انانا اور اس کے مشرقی سامی ہم منصب اشتر کی علامت ہے۔ شیر کے ساتھ ساتھ، یہ اشتر کی بنیادی علامتوں میں سے ایک تھا۔ چونکہ اشتر کا تعلق سیارہ زہرہ سے تھا، اس لیے اس ستارے کو زہرہ کا ستارہ بھی کہا جاتا ہے۔


Wikipedia, Star of Ishtar, 2021


ان لوگوں کا خیال تھا کہ زہرہ ایک ستارہ ہے۔ حالانکہ قرآن نے یہ غلطی نہیں کی بلکہ یہ کہتا ہے کہ یہ ایک سیارہ ہے۔


Quran 6:74-79

ابراہیم نے اپنے باپ آزر سے کہا، "کیا تم بتوں کو معبود بناتے ہو؟ میں دیکھ رہا ہوں کہ تم اور تمہاری قوم صریح گمراہی میں ہے۔" اس طرح ہم نے ابراہیم کو آسمانوں اور زمین کی سلطنت دکھائی تاکہ وہ یقین والوں میں سے ہو جائیں۔ جب رات اس پر پڑی تو اس نے ایک سیارہ دیکھا ۔ اس نے کہا یہ میرا آقا ہے۔ لیکن جب وہ غروب ہوا، تو اس نے کہا، ’’میں ڈوبنے والوں سے محبت نہیں کرتا۔‘‘ پھر جب چاند کو طلوع ہوتے دیکھا تو کہا یہ میرا آقا ہے۔ لیکن جب وہ ڈوب گیا تو اس نے کہا کہ اگر میرا رب میری رہنمائی نہ کرے تو میں گمراہ لوگوں میں سے ہو جاؤں گا۔ پھر جب سورج کو طلوع ہوتے دیکھا تو کہا کہ یہ میرا آقا ہے، یہ بڑا ہے۔ لیکن جب وہ غروب ہو گیا تو اس نے کہا اے میری قوم، میں تمہاری بت پرستی سے بری ہوں۔ میں نے اپنی توجہ اس کی طرف مبذول کر لی ہے جس نے آسمانوں اور زمینوں کو پیدا کیا ہے جو ایک توحید پرست ہے اور میں مشرکوں میں سے نہیں ہوں۔‘‘


٧٤ وَإِذْ قَالَ إِبْرَاهِيمُ لِأَبِيهِ آزَرَ أَتَتَّخِذُ أَصْنَامًا آلِهَةً ۖ إِنِّي أَرَاكَ وَقَوْمَكَ فِي ضَلَالٍ مُبِينٍ

٧٥ وَكَذَٰلِكَ نُرِي إِبْرَاهِيمَ مَلَكُوتَ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ وَلِيَكُونَ مِنَ الْمُوقِنِينَ

٧٦ فَلَمَّا جَنَّ عَلَيْهِ اللَّيْلُ رَأَىٰ كَوْكَبًا ۖ قَالَ هَٰذَا رَبِّي ۖ فَلَمَّا أَفَلَ قَالَ لَا أُحِبُّ الْآفِلِينَ

٧٧ فَلَمَّا رَأَى الْقَمَرَ بَازِغًا قَالَ هَٰذَا رَبِّي ۖ فَلَمَّا أَفَلَ قَالَ لَئِنْ لَمْ يَهْدِنِي رَبِّي لَأَكُونَنَّ مِنَ الْقَوْمِ الضَّالِّينَ

٧٨ فَلَمَّا رَأَى الشَّمْسَ بَازِغَةً قَالَ هَٰذَا رَبِّي هَٰذَا أَكْبَرُ ۖ فَلَمَّا أَفَلَتْ قَالَ يَا قَوْمِ إِنِّي بَرِيءٌ مِمَّا تُشْرِكُونَ

٧٩ إِنِّي وَجَّهْتُ وَجْهِيَ لِلَّذِي فَطَرَ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضَ حَنِيفًا ۖ وَمَا أَنَا مِنَ الْمُشْرِكِينَ


"کوکب كَوْكَبً ۖ" کا مطلب سیارہ ہے۔ وہ لوگ سورج، چاند اور کسی سیارے کی پوجا کرتے تھے۔ ستارہ نہیں

1400 سال پہلے رہنے والے ان پڑھ آدمی کو کیسے معلوم ہو سکتا تھا کہ زہرہ ایک سیارہ ہے؟

آپ کاپی، پیسٹ اور شیئر کر سکتے ہیں... 

کوئی کاپی رائٹ نہیں 

  Android

Home    Telegram    Email
وزیٹر
Free Website Hit Counter



  Please share:   

Website Building Software