نوح

تاریخ - انٹرمیڈیٹ

مقامی سیلاب، عالمی نہیں۔

بائبل اصرار کرتی ہے کہ نوح کا سیلاب عالمی تھا اور کوئی بھی زندہ نہیں بچا سوائے مومنوں کے جو نوح کے ساتھ کشتی پر سوار ہوئے تھے۔ تاہم قرآن کہتا ہے کہ سیلاب مقامی تھا اور نوح کے علاوہ تمام قومیں بچ گئیں۔

مقامی سیلاب بہت عام ہیں تاہم عالمی سیلاب کا کوئی سائنسی ثبوت نہیں ہے۔ لیکن عالمی سیلاب کی کہانیاں پوری دنیا کی بہت سی قدیم ثقافتوں میں پائی جاتی ہیں۔ اگر یہ ایک عالمی سیلاب ہوتا، جیسا کہ بائبل میں بیان کیا گیا ہے، تو نوح کے ساتھ کشتی پر سوار ہونے والے مومنوں کے علاوہ کوئی نہ بچ پاتا۔ کوئی کافر نہ ہوگا جو کشتی میں سوار نہ ہوا ہو اور بچ گیا ہو۔ حالانکہ قرآن کچھ اور کہتا ہے، یہ کہتا ہے کہ ایسے کافر تھے جو کشتی میں سوار نہیں ہوئے اور پھر بھی بچ گئے:


Quran 11:48

کہا گیا کہ اے نوح ہماری طرف سے سلامتی کے ساتھ اتر جا اور تجھ پر اور تیرے ساتھ والی امتوں پر برکت کے ساتھ اور دوسری امتوں کو ہم فلاح دیں گے اور بعد میں ان کو دردناک عذاب دیں گے۔


٤٨ قِيلَ يَا نُوحُ اهْبِطْ بِسَلَامٍ مِنَّا وَبَرَكَاتٍ عَلَيْكَ وَعَلَىٰ أُمَمٍ مِمَّنْ مَعَكَ ۚ وَأُمَمٌ سَنُمَتِّعُهُمْ ثُمَّ يَمَسُّهُمْ مِنَّا عَذَابٌ أَلِيمٌ


چونکہ خدا ان کو بعد میں سزا دے گا تو یقیناً وہ کافر تھے جو کشتی میں سوار نہیں تھے، اگر کشتی میں صرف مومن سوار ہوئے لیکن پھر بھی کافر بچ گئے تو اس کا مطلب یہ ہے کہ یہ صرف مقامی سیلاب تھا۔ جو علاقے میں نہیں تھے وہ بچ گئے۔

اگلی ہی آیت کہتی ہے کہ یہ قصہ پہلے معلوم نہیں تھا:


Quran 11:49

یہ ماضی کی کچھ کہانیاں ہیں جو ہم آپ پر ظاہر کرتے ہیں۔ اس سے پہلے نہ تو آپ کو جانتے تھے اور نہ آپ کی قوم۔ تو صبر کرو۔ مستقبل متقیوں کا ہے۔


٤٩ تِلْكَ مِنْ أَنْبَاءِ الْغَيْبِ نُوحِيهَا إِلَيْكَ ۖ مَا كُنْتَ تَعْلَمُهَا أَنْتَ وَلَا قَوْمُكَ مِنْ قَبْلِ هَٰذَا ۖ فَاصْبِرْ ۖ إِنَّ الْعَاقِبَةَ لِلْمُتَّقِينَ


بائبل تمام کافروں کو مارنے والے عالمی سیلاب پر اصرار کرتی ہے۔ قرآن میں یہ کہانی، کہ دوسرے کافر بچ گئے، پچھلی ثقافتوں کو معلوم نہیں تھا اور اس کا اعلان کرنے والا سب سے پہلے قرآن تھا۔

قرآن میں آخری نبی تمام قوموں کے لیے بھیجا گیا لیکن نوح کو صرف اپنی قوم کے لیے بھیجا گیا:


Quran 21:107

ہم نے آپ کو تمام امتوں کے لیے رحمت بنا کر بھیجا ہے۔


١٠٧ وَمَا أَرْسَلْنَاكَ إِلَّا رَحْمَةً لِلْعَالَمِينَ


العالمین الْعَالَمِينَ کا عربی میں مطلب ہے "تمام اقوام"۔ آخری نبی تمام قوموں کے لیے بھیجا گیا تھا، تاہم نوح کو صرف اپنی قوم کے لیے بھیجا گیا تھا۔


Quran 7:59

ہم نے نوح کو اس کی قوم کی طرف بھیجا۔ اس نے کہا اے میری قوم اللہ کی عبادت کرو، اس کے سوا تمہارا کوئی معبود نہیں، مجھے تم پر ایک بڑے دن کے عذاب کا اندیشہ ہے۔


٥٩ لَقَدْ أَرْسَلْنَا نُوحًا إِلَىٰ قَوْمِهِ فَقَالَ يَا قَوْمِ اعْبُدُوا اللَّهَ مَا لَكُمْ مِنْ إِلَٰهٍ غَيْرُهُ إِنِّي أَخَافُ عَلَيْكُمْ عَذَابَ يَوْمٍ عَظِيمٍ


قرآن میں نوح کو صرف اپنی قوم کی طرف بھیجا گیا تھا، تمام قوموں کی طرف نہیں۔ اور جو سیلاب میں ڈوب گئے وہ اس کی اپنی قوم کے کافر تھے، تمام قوموں سے نہیں۔ قرآن نے کبھی یہ نہیں کہا کہ اللہ نے تمام قوموں کو غرق کر دیا۔ تاہم قرآن نے مسلسل کہا کہ خدا نے صرف نوح کی قوم کو غرق کیا۔


Quran 25:37

اور نوح کی قوم: جب انہوں نے رسولوں کو جھٹلایا تو ہم نے انہیں غرق کر دیا اور لوگوں کے لیے عبرت بنا دیا۔ ہم نے ظالموں کے لیے دردناک عذاب تیار کر رکھا ہے۔


٣٧ وَقَوْمَ نُوحٍ لَمَّا كَذَّبُوا الرُّسُلَ أَغْرَقْنَاهُمْ وَجَعَلْنَاهُمْ لِلنَّاسِ آيَةً ۖ وَأَعْتَدْنَا لِلظَّالِمِينَ عَذَابًا أَلِيمًا


خدا نے نوح کی اپنی قوم قَوْمَ نُوحٍ میں سے کافروں کو غرق کر کے انسانوں کے لیے عبرت کا نشان بنا دیا۔ قرآن نے کبھی یہ نہیں کہا کہ اللہ نے انسانوں کو غرق کیا۔

نوح کو صرف اپنی قوم کے لیے بھیجا گیا تھا، تمام قوموں کے لیے نہیں۔ اور نوح نے خدا کا پیغام صرف اپنے لوگوں کے لیے پیش کیا، نہ کہ تمام قوموں کے لیے۔ اور جنہوں نے پیغام کو رد کیا وہ نوح کی اپنی قوم سے تھے، تمام قوموں سے نہیں۔ تو خدا نے نوح کی اپنی قوم سے کافروں کو غرق کر دیا، تمام قوموں کو نہیں۔ قرآن میں دیگر تمام اقوام کا سیلاب سے کوئی تعلق نہیں تھا۔ اس کا مطلب ہے کہ یہ صرف ایک مقامی سیلاب تھا۔

قرآن نے صرف نوح کی ملکیت کی چیزوں کا حوالہ دیا:


Quran 11:40

یہاں تک کہ جب ہمارا حکم آیا اور زمین کا تنور ابل پڑا تو ہم نے کہا کہ اس میں ہر قسم کے جوڑے سوار ہو جاؤ اور اپنے اہل و عیال کے سوائے ان لوگوں کے جن کے خلاف سزا ہو چکی ہے اور جو ایمان لائے ہیں۔ لیکن اس کے ساتھ ایمان لانے والے چند ہی تھے۔


٤٠ حَتَّىٰ إِذَا جَاءَ أَمْرُنَا وَفَارَ التَّنُّورُ قُلْنَا احْمِلْ فِيهَا مِنْ كُلٍّ زَوْجَيْنِ اثْنَيْنِ وَأَهْلَكَ إِلَّا مَنْ سَبَقَ عَلَيْهِ الْقَوْلُ وَمَنْ آمَنَ ۚ وَمَا آمَنَ مَعَهُ إِلَّا قَلِيلٌ


"تنور التَّنُّورُ" بیکنگ کے لیے زمین میں ایک سوراخ ہے جسے ارتھ اوون کہا جاتا ہے۔ جب زمینی پانی گرم تندور تک پہنچا تو پانی ابل پڑا۔ لیکن ابلا ہوا "تنور" واحد موڈ میں ہے، جمع نہیں۔ اگر یہ عالمی سیلاب ہوتا تو زمین پر موجود ہر تنور کو ابلنا چاہیے تھا۔ لیکن یہ معاملہ نہیں تھا، صرف تنور جس کی وہ ملکیت تھی۔ "تنور" سے ہمیں معلوم ہوا کہ یہ آیت اس چیز کی طرف اشارہ کر رہی ہے جو صرف اس کی ملکیت تھی۔ اسی طرح اسی آیت میں جو جانور کشتی پر سوار ہوئے وہ بھی وہ جانور ہیں جن کی ملکیت صرف اس کی تھی، زمین کے ہر جانور کی نہیں۔

عالمی سیلاب کا کوئی سائنسی ثبوت نہیں ہے، تاہم مقامی سیلاب بہت عام ہیں۔

ایک ناخواندہ آدمی جو 1400 سال پہلے رہتا تھا وہ کیسے جان سکتا تھا کہ عالمی سیلاب نہیں آیا؟

آپ کاپی، پیسٹ اور شیئر کر سکتے ہیں... 

کوئی کاپی رائٹ نہیں 

  Android

Home    Telegram    Email
وزیٹر
Free Website Hit Counter



  Please share:   

AI Website Generator